شہ سرخیاں
Home / اداریہ / گولین گول2 میگا واٹ بجلی اور چترال ٹاؤن کے دس سوالات

گولین گول2 میگا واٹ بجلی اور چترال ٹاؤن کے دس سوالات

رمضان المبارک کا بابرکت مہینہ اور آج عید کا دوسرا دن بھی گزر گیا ہے لیکن بجلی کا مسئلہ جوں کا توں ہے آخر کب تک؟
سیاسی قیادت کی جانب سے بلند و بانگ دعوے بھی اپنے عروج پر ہیں گویا کہ ہر ایک جانب رسہ کشی کا سا سماں ہے آخر کب تک؟
ماتحت افراد سے اگر پوچھ گچھ ہوبھی تو بہت خوبصورتی سے آج ،کل یا پھر پرسوں کا کہہ کر خود کو فارغ الذمہ کرتے ہیں گویا کہ بجلی بس ابھی ابھی آئے گی ۔ جھوٹ کا یہ سلسلہ آخر کب تک؟
بے چارے عوام ایک خلش کا شکار ، شدید گرمی کے ستائے مایوسی سے دوچار کس سے گلہ کریں اور کس کو مورد الزام ٹہرائیں آخر کب تک؟
چترال میں کیا سیاست کرنے کے لیے بجلی کے علاوہ کچھ اور نہیں بچا ہے صرف بجلی پہ ہی سیاست آخر کب تک؟
ہمارے سیاسی قائدین وفاقی وصوبائی ممبرز،ضلعی حکومت ، ڈی سی او صاحب ،ٹاؤن پاورکمیٹی ، ایس۔ آر ۔ایس ۔پی اور واپڈا اس معمے کو حل کیوں نہیں کرتے ایساآخر کب تک؟
گولین گول2 میگا واٹ بجلی بن بھی گئی اور بجلی کی پیداوار شروع بھی ہوگئی مگر 2 میگا واٹ بجلی کہاں جاتی ہے زمین کھا گئی یا آسمان نگل گیایونہی آخر کب تک؟
چترال ٹاؤن کے لیے یہ 2 میگا واٹ کی بجلی بنی تھی اور ایس۔ آر۔ ایس۔ پی والوں نے کہا بھی تھا کہ یہ بجلی صرف اور صرف ٹاؤن کے لیے بنی ہے لیکن ٹاؤن کو بجلی سے محروم کون اور کیوں کر رکھ رہا ہے سو آخر کب تک؟
بجلی ٹاؤن کے لیے ازحد ضروری ہے کیوں کہ ٹاؤن کے اندر ہسپتال ،اسکولز و کالجز، بنک اور مختلف دفاتروغیرہ واقع ہیں جن سے پورا ضلع چترال مستفید ہوتا ہے پھر ٹاؤن کے ساتھ ناانصافی آ خر کب تک؟
ہم چترال ٹاؤن کے عوام الناس یک زبان ہوکرپرزور اپیل کرتے ہیں کہ چترال ٹاؤن کے لیے یہ 2 میگا واٹ بجلی کے معاہدے کو بروئے کار لاتے ہوئے ایس ۔آر ۔ایس۔ پی ایفائے عہد کو پورا کریں تاکہ ہمیشہ کے لیے عوام الناس کے زبان سے یہ مہاورہ ختم ہو جائے ۔۔۔
آخر کب تک؟

Facebook Comments

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے