شہ سرخیاں
Home / اداریہ / گورنر کاٹیج روڈ طاقتور مافیا کے ہاتھوں میں!

گورنر کاٹیج روڈ طاقتور مافیا کے ہاتھوں میں!

چیف ایڈیٹر عاصم محمد

گورنر کاٹیج روڈ جو کہ گورنر ہاؤس کی وجہ سے ایک شناخت رکھتا ہے۔ٹاؤن کے بلکل وسط میں واقع ہے۔بائی پاس چوک سے اگر گولدور کی جانب مڑیں تو گورنر کاٹیج روڈ آتاہے۔گورنر ہاؤس ٹاؤن کے ساتھ ملحقہ اور موضوع ترین جگہ ہے۔مگرکیا گورنر کاٹیج روڈ کو ایک مافیا کے حوالے کرکے اس کی خوبصورتی صفائی و ستھرائی کو تباہ و برباد کرنا ظلم نہیں ہے۔جب بھی آپ گورنر کاٹیج روڈپر سفر کریں گھاڑی کےْ ذریعے یا پیدل دو تین قدم چلنے کے بعد آپ کو بد ترین بدبوکی لہر اور غلاظت کا سامنا کرنا پڑے گااوراس غلاظت کی وجہ  پولٹری فارمز بنے ہوئے ہیں جو کہ سراسر گورنر کاٹیج روڈ کے ساتھ ناانصافی ہے۔

آپ رومال سے اپنا منہ ڈھامپے بغیر ہرگز ہرگز گورنر کاٹیج روڈ سے گزرنا گوارہ نہ کرے۔ایک لمحے کے لیے آپ کوایسا لگے گا کہ آپ گورنر کاٹیج روڈنہیں بلکہ آپ پنجاب کے کسی گندی شہر سے گزر رہے ہوں جہاں صفائی و ستھرائی نام کی کوئی چیز ہی نہ ہو۔ میں اور آپ جو کہ عام عوام میں شامل ہیں ہر روز اس راستے سے گزرتے ہیں جو کہ ہماری مجبوری ہے اورکریں بھی تو کیا کریں؟
ملکی و غیر ملکی مہمانوں کا اسی راستے سے اکثر و بیشتر گزر ہوتا ہے۔ وزیر سے لیکر ر وزیر اعظم تک کو اسی راستے سے ہوکر گورنر ہاؤس تک جانا پڑتا ہے ۔اب آپ خود فیصلہ کریں اگر کوئی ملکی یا غیر ملکی سیاح اس روڈ سے گزرے اوران پولٹری فارمز کی وجہ سے جو ماحولیاتی آلودگی کا سبب بنے ہوئے ہیں وہ کیا سوچیں گے اور ان کو کیا پیٖغام ملے گا۔یہاں ایک بات قابل غور ہے کہ ان پولٹری فارمز ساتھ ہی ایک ندی کا گزر ہوتا ہے جو کہ یہ لوگ اسے اپنے ڈسٹبن(DUSTBIN)کے طور پر استعمال کررہے ہیں اور متعلقہ ادارے خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں۔اور یہ پانی دریا کے پانی کے ساتھ ملکر بڑے پیمانے پر گندگی کا سبب بنتی ہے۔

جب ہم ان پولٹری فارمز سے چند قدم آگے جائیں توہمیں ایک اور مافیا گورنر کاٹیج روڈ پر قبضہ جمائے نظر آتا ہے۔گورنر کاٹیج روڈ کا مشہور معروف کباڑی جس نے سارے چترال کا کچہرا اور گندگی گورنر کاٹیج میں اپنے گوداموں میں جمع کررکھا ہے۔اور سڑک کنارے عوامی فٹ پاتھ پر بھی قبضہ جمایا ہوا ہے۔جہاں ہدی ،پلاسٹک ،کوڑا کرکٹ ،کاغذاور شیشے کی بوتلیں سرعام پڑی ہیں ۔

جب پشاور منتقلی کی باری آتی ہے تو ایک بڑاسا ٹرک بیچ سڑک کھڑی کرکے لوڈنگ کی جاتی ہے جوکہ ایک اور مصیبت پیداکرتی ہے گاڑیوں سمیت عام راہگیروں کو سخت مشکلات اٹھانی پڑتی ہیں۔

آخر میں ٹاؤن انتظامیہ سے ایک سوال کرنا حق بجانب سمجھتا ہوں کہ ٹاؤن کی اور گورنر کاٹیج روڈ کی خوبصورتی اورصفائی کا خیا ل رکھنے والے ذمہ دارافراد اب تک کیوں خاموش بیٹھے ہیں اور ان مافیا کے لوگوں کے خلاف کیوں کوئی کاروائی عمل میں نہیں لائی جاتی ؟؟؟؟

Facebook Comments

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے