شہ سرخیاں
Home / تازہ ترین / آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ میں ضلعی سطح پر ریاضی اور سائنسی معلومات کے مقابلے

آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ میں ضلعی سطح پر ریاضی اور سائنسی معلومات کے مقابلے

چترال(نمائندہ چترال آفیئرز)گزشتہ روز آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ میں ضلعی سطح پر چترال کے گورنمنٹ اور پرائیویٹ سکول اور کالجز اور آغاخان ایجوکیشن سروس چترال کے زیرِانتظام چلنے والے  سکول  جن میں آغاخان ہائیر سکنڈری سکول  کوراغ اور سین لشٹ اہم ہیں ، کے طلبہ و طالبات کے درمیان ریاضی اور سائنسی معلومات کےمقابلے کر ائے گئے۔اس مقابلے میں ضلع بھر سے   دس سکولوں  کے ایس ایس سی لیول کے طلبا و طالبات اور چھ  ہائیر سکنڈری  سکولوں اور کالجز  کے ایچ ایس ایس سی لیول کے طلباو طالبات  نے شرکت کی۔
اس تقریب کی صدارت سابق پرنسپل سعیداللہ جان نے کی جبکہ  مہمان خصوصی ڈپٹی ڈسٹرکٹ ایجوکیشن  آفیسر ممتاز محمد وردگ تھے۔  پروگرام میں  سنئیر منیجر سکول ڈویلپمنٹ  اے کے ای ایس چترال ذوالفقار علی، ایچ آر منیجر اے کے ای ایس چترال اختر نواز، اے ڈی او چترال شہزاد ندیم ،  آر ای بی چئیر پرسن اپر چترال معراج الدین ، پرنسپل آغاخان ہائیر سکنڈری سکول سین لشٹ چترال  طفیل نواز، دیگر سرکار ی اور نجی کالجز اور سکولوں کے پرنسپل اور ہیڈ ماسٹرز ،  ہیڈ مسٹرس، ریٹائر ڈ ہیڈ ماسٹرز،  اساتذہ اور طلبہ   سمیت والدین کثیر تعداد میں شریک ہوئے۔
      تلاوت کلام پاک ، نعت رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور ملی نغمہ کے بعد پرنسپل آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ سلطانہ برہان الدین نے مہمانون کو خوش آمدید  کہنے کے ساتھ  کوئز کمپیٹشن کےمقاصد کی وضاحت کرتے ہوئے کہاکہ اس سے  طلبہ وطالبات میں باہمی تعاون ،  علم کے تبادلے   ، محنت ،لگن ا، خندہ پیشانی سے   مسائل کا مقابلے کا حوصلہ اور خود اعتمادی  پیدا ہوگی۔  انھوں نے مزید کہا کہ آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ   طالبات کی شخصیت کی بھرپور نشوونما کے لئے نصابی اور غیر نصابی سرگرمیوں پر مکمل یقین رکھتا ہے۔ جب تک ہم سکولوں میں طلبا و طالبات کو مقابلے کے لیے تیار نہیں کریں گے تو یہ آگے جاکر دوسروں  سے مقابلے کے اہل نہیں ہوں گے۔
مقابلے میں  منصفین کے فرائض گورنمنٹ بوائز  ڈگری کالج بونی  کے کیمیات،طبعیات، حیاتیات اور ریاضی  کے اساتذ ہ ڈاکٹر اسداالرحمٰن ،عزیز االرحمٰن ، جمشید سروراور افتخارالدین نے انجام دیے ۔ جبکہ گورنمنٹ بوائز  ڈگری کالج  چترال کے کیمیات اور طبعیات کے  اساتذہ تنزیل الرحمٰن اور رحمت حاصل نے میزبانی کی۔
پہلے مرحلے  ایس ایس سی لیول کے لیے سکولوں کے درمیان مقابلہ ہوا۔ جس  میں آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ نے پہلی ،  آغاخان  سکول بونی  نے دوسری جبکہ آغاخان ہائیر سکنڈری سکول  چترال نے تیسری پوزیشن حاصل کی۔
        دوسرے مرحلے میں ہائیر سکنڈری  لیول کے لیے سکولوں  کے درمیان مقابلہ ہوا جس میں دلچسپ مقابلے کے بعد آغاخان ہائیر سکنڈری سکول سین لشٹ چترال نے پہلی ، آغاخان ہائیر سکنڈری سکول  کوراغ نےدوسری اور ایف سی پی ایس چترال نے تیسری پوزیشن حاصل کی۔
     اس موقع پر پروگرام کے مہمان خصوصی  ڈپٹی ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر چترال ممتاز محمد وردگ نے آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ اس پروگرام سے مجھے بہت خوشی ہوئی  کیونکہ  اس میں تخلیق بھی ہے ، جوش و جذبہ بھی اور اس میں منزل کو پانے کا لائحہ عمل بھی ہورہا ہے۔انھوں نے مزید کہا کہ آج دنیا میں میٹریل کے حصول کے لئے جنگ نہیں ہورہی ہے بلکہ علم کے میدان میں ، نظریے میدان اور ثقافت کے میدان میں مقابلہ ہورہا ہے ۔ ترقی یافتہ ممالک اس  دوڑ میں ہیں کہ ساری دنیا   ان کی اقدار کی گاہک بن جائے۔ آج دنیا میں وہی قوم آگے ہو گی جو اپنی ثقافت ، اپنی تہذیب ، اپنے فلسفے ، اپنی اقدار اور اپنی میراث کی حفاظت کی  اور وہ قوم صفحہ ء ہستی سے مٹ جائے گی   جو ان کو گنوا دے ۔  علم  مسلمانوں کی کھوئی ہوئی میراث ہے اس لئے اس کی حفاظت کرنا  عموماً ہر فرد کی اورخصوصاً  طلباء اور اساتذہ کی  ذمہ داری ہے  کیونکہ اساتذہ معمار ِقوم ہیں اور طلباء قوم کے مستقبل۔
انھوں  نے  بہتر کارکردگی کی بنیاد پر محکمہ ء تعلیم ضلع چترال کی طرف سے  آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ اور آغاخان ہائیر سکنڈری سکول سین لشٹ چترال کو سکول آف ایکسیلینس ایوارڈ دینے   کا اعلان کیا۔
 تقریب کے آخر میں کوئز   مقابلے میں شرکت کرنے والے طلباء و طالبات میں سرٹیفیکیٹ جبکہ پہلی ، دوسری اور تیسری پوزیشن حاصل کرنے والے طلباء و طالبات میں سرٹیفیکیٹ سمیت شیلڈ تقسیم کیے گئے۔ اس اثنا میں آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ کے زیر انتظام ضلعی سطح پر ایچ ایس ایس سی لیول میں  انگریزی میں ہونے والے تخلیقی مقابلے میں  نمایان  پوزیشن حاصل کرنے والے طلبہ کوجن میں آغاخان ہائیر سکنڈری سکول کوراغ کی  وسیمہ ناز نے پہلی ، آغاخان ہائیر سکنڈری سکول سین لشٹ کے فخر عالم نے دوسری اور  چترال نیو سٹی کالج چترال کے قاضی جنید نے تیسری پوزیشن حاصل کی تھی
Facebook Comments