شہ سرخیاں
Home / تازہ ترین / نو مہینوں سے تنخواہوں کی عدم ادائیگی اور پھر ملازمت سے بر طرف کیے جانے کے خلاف محکمہ فارسٹ اور اور وایلڈ لائف کے ملازمین’’ نگہبان‘‘ بونی چوک میں جلسہ، دھرنا اور بھوک ہڑتال پر اُتر آئے۔

نو مہینوں سے تنخواہوں کی عدم ادائیگی اور پھر ملازمت سے بر طرف کیے جانے کے خلاف محکمہ فارسٹ اور اور وایلڈ لائف کے ملازمین’’ نگہبان‘‘ بونی چوک میں جلسہ، دھرنا اور بھوک ہڑتال پر اُتر آئے۔

بونی (نمائندہ چترال  آفیئرز )نو مہینوں سے تنخواہوں کی عدم ادائیگی اور پھیر ملازمت سے بر طرف کیے جانے کے خلاف محکمہ فارسٹ اور اور وایلڈ لائف کے ملازمین’’ نگہبان‘‘ بونی چوک میں جلسہ، دھرنا اور بھوک ہڑتال پر اُتر آئے۔ ان کا کہنا ہے کہ ان کا ہڑتال دن رات جاری رہیگی۔ نگہبان نام کہ یہ ملازمین تقریباً دو سالوں سے محکمہ وایلڈ لائف کے ساتھ خدمات سرانجام دے رہی تھے اور تنخواہیں انہیں محکمہ فارسٹ ادا کر رہی تھی ۔ اگر چہ نگہبان کے فرائض میں کچھ اور کام شامل تھے تا ہم ان کا کہنا ہے کہ محکمہ وایلڈ لائف ان سے واچر جیسے ڈیوٹی لے رہی تھی ۔ ان کے ذریعے غیر قانونی شکاریوں کے گرد گھیراو تنگ کرنا اور مختلف شکاریوں کو چالان کرنے میں ان سے مدد لینا ان کے ڈیوٹی میں خود ساختہ طور پر شامل کیے گئے تھے حالانکہ یہ ان کے فرائض میں ہر گز شامل نہیں تھے۔ لیکن با امر مجبوری وہ ان کے ساتھ ہر مہم میں شریک ہوتے تھے اس بناء ان کے اور دوسرے لوگوں خصوصاً رشتہ داروں کے درمیاں عداوتیں بھی پیدا ہو گئی ۔ ان خدمات کے عوض انہیں کوئی معاوضہ دینے کے بجائے نومہینوں کے تنخواہیں ادا کیئے بے غیر بہ یک جنبشِ قلم انہیں ملازمت سے بھی فاریغ کردیا گیا جو کہ ان کے ساتھ ظلم و زیادتی کے مترادف ہے ۔اور انہیں ناکردہ گناہوں کی سزا دی جاری ہے ۔ وہ اس وجہ سے دوسری کہیں مزدوری وغیرہ سے بھی محروم رہے اور نوبت یہاں تک پہنچی کہ ان کے خاندان فاقہ کشی کے شکار ہوئے۔ بھوک ہڑتال پر موجود خورشید اور نبی خان نے کہا کہ کہ ہم نے اپنے حق کے حصول کے خاطرہر قانونی راستہ اپنانے کی از حد کوشش کی جو کہ مکمل بے سود ثابت ہوئے محکمہ فارسٹ اور وایلڈ لائف ایک دوسرے کو موردِ الزام ٹھہراتے ہوئے ہمارے تنخواہوں کی ادائیگی میں لیت و لعل سے کام لے رہی ہے انجام کار ہم اپنا فریاد لیکر چوک تک آنے پر مجبور ہوئے ۔ اگر پھربھی ہمارے مسائل حل کرنے کی کوشش نہیں کی گئی تو بات چوک سے آگے نکل کر لانگ مارچ اور روڈ بلاک تک پہنچ جائیگی۔ جو کہ مجبوری ہوگی اور اس کی تمام تر زمہ داری محکمہ فارسٹ اور محکمہ وایلڈ لائف پر عائد ہوگی۔

Facebook Comments