شہ سرخیاں
Home / تازہ ترین / لیویزکی ریگولرپولیس فورس میں‌ادعام اورچترال چیمبرکیلئے 20ملین گرانٹ کی منظوری دیدی گئی

لیویزکی ریگولرپولیس فورس میں‌ادعام اورچترال چیمبرکیلئے 20ملین گرانٹ کی منظوری دیدی گئی

پشاور )چترال افیئرز )‌ صوبائی کابینہ کا اجلاس وزیر اعلیٰ محمود خان کی زیر صدارت کابینہ ہال پشاور میں منعقد ہوا۔ صوبائی کابینہ نے خیبر پختونخوا پولیس فیز۔(I)لیویزاور خاصہ دار فورسز کی ریگولر پولیس میں ادغام کی با قاعدہ منظوری دیدی۔ صوبائی وزیر اطلاعات شوکت یوسفزئی نے ترجمان صوبائی حکومت اجمل وزیر کے ساتھ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہاکہ حکومت میں اختلافات کی خبریں بے بنیا د ہیں پاکستان تحریک انصاف میں کوئی گروپنگ نہیں، سیاسی پارٹیوں میں اختلاف رائے ہوتا ہے۔وزیر اعلیٰ محمود خان بہترین کام کر رہے ہیں۔ فاٹا انضمام وہاں پر عدالتوں کے قیام اور پولیس کی تعیناتی اور بر وقت انتخابات کو یقینی بنایا۔انہوں نے کہا کہ بچوں سے زیادتی کی کیسسز کے روک تھام کیلئے قانون سازی کی ضرورت ہے جس میں سخت سزائیں تجویز ہوں سخت سزاوٗں سے ایسے مائند سیٹ کا خاتمہ ممکن ہے۔کا بینہ اجلاس کے فیصلوں سے میڈیا کو آگاہ کرتے ہوئے صوبائی وزیر نے کہا کہ خیبرپختونخوا میں WSSC کے یوٹیلیٹی چارجز سمیت ملازمین کی تنخواہوں کی ادا ئیگی کیلئے جاری اخراجات میں 50 ملین کا اضافہ کیا گیا ہے اور 500ملین کی گرانٹ ان ایڈ کو1بلین تک بڑھایا گیا ہے۔خیبر پختونخوا فنانس ایکٹ2013ء کے تحت سروسز پر سیلز ٹیکس کیلئے اپیلٹ ٹریبیونل کے قیام کی منظوری دی گئی جس کے بعد سید انیس بخاری (District & Session Judge) خیبر پختونخوا اپیلٹ ٹریبونل کے ممبر ہوں گے جو ٹیکس اور سروسز سے متعلق امور کیلئے ان کی خدمات درکار ہو ں گی۔اُن کی خدمات تین سال تک ڈیپوٹیشن کی بنیاد پر ہوگی۔صوبائی کابینہ نے پشاور ہائی کورٹ کے فیصلے کے تحت محکمہ زراعت کے ایگریکلچر گریڈ۔17آفیسرکو 33فیصد سلیکشن گریڈ دینے کی منظوری دی۔اس فیصلے کے تحت غیر ترقیاتی اخراجات کی مد میں محکمہ خزانہ 40.26ملین روپے جاری کرے گا۔

صوبائی کابینہ نے قیدی محمد اکرام ولد سید کریم کی ATCCمردان سے ATC پشاور میں ٹرائل کی منتقلی کی منظوری دی۔جوینائل (کمسن بچوں) ایکٹ2018کے تحت جوینائل کورٹس کا قیام صوبائی کابینہ میں پیش کیاگیا اس قانون کا بنیادی مقصد جوینائل جسٹس سسٹم کو مزید موثر بنانا ہے۔صوبائی کابینہ نے اس کی منظوری دی جس کے تحت موجودہ ججز کوجوینائل ججز کے طور پرنامزد کیا جائیگا۔تاہم مستقبل میں ہر ضلع میں جوئینائل کورٹس کیلئے اعلیحدہ ججز کا تقرر کیا جائیگا اور جوینائل کیلئے جداگانہ جیلیں بنانے پر بھی کام ہو رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ صوبائی کابینہ نے 22 ہیلی کاپٹرزکی بہتر مرمت اور آپریشن کیلئے پاکستان ائر فورس (پی اے ایف) کے ساتھ معاہدے کی روشنی میں ضروری ترامیم کی منظوری دی جس میں نئی آسامیاں، تنخواہوں اور دیگر مراعات شامل ہیں۔

.

صوبائی کابینہ نے خیبر پختونخوا سپیشل پولیس آفیسر (ریگولرائزیشن آف پولیس) بل2019ء کی منظوری دی جس کے تحت کنٹریکٹ یا فکسڈ پے پر بھرتی سپیشل پولیس افسران کی مدت میں توسیع کی منظوری دیدی ہے وزیر اعلیٰ نے ہدایت کی کہ محکمہ جلد از جلد سپیشل افسران کی مستقلی کا کیس تیار کرے۔

.

صوبائی کابینہ نے چترال چیمبر آف کامرس کی بلڈنگ کی تعمیرکیلئے صوبے کو جاری بجٹ سے20 ملین سپلیمنٹری گرانٹ کی منظوری دیدی۔ضلع چترال بے شمار معدنیات،صنعتی میٹریل، زراعت، ٹورازم،پن بجلی کے وسائل سے مالامال ہے۔صوبائی حکومت ان وسائل سے استفادہ کرنے اور ضلع چترال کے عوام کو ترقی کے دھارے میں شامل کرنے کی ہر ممکن مدد فراہم کر رہی ہے۔اس اقدام سے ضلع چترال میں صنعتی ترقی کو فروغ ملے گی۔

صوبائی کابینہ نے مالی سال2019-200 کے دوران ریٹائرڈ ہونے والے ججز کی پنشن کی ادائیگی کیلئے 472ملین روپے ریلیزکرنے کی منظوری دی۔کابینہ نے سول پروسیجرکوڈ میں مجوزہ ترامیم کے حوالے سے عمل درآمد کو90دن تک ملتوی کرنے کی منظوری دیدی۔

شوکت یوسفزئی نے کہا کہ صوبائی کابینہ نے منرل انوسٹمنٹ فیسیلیٹیشن اتھارٹی کے قیام کی منظوری دی۔کابینہ کے فیصلے کی روشنی میں مورخہ27جولائی2016 کا نوٹیفیکیشن منسوخ تصور ہوگا اور7ممبران پر مشتمل منرل انوسٹمنٹ فیسیلیٹیشن اتھارٹی کی منظوری دی گئی جو منرل سیکٹر گورننس ایکٹ 2017 کے تحت عمل میں لائی جائے گی۔

.

پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف Prosthetic and orthoticc سائنس ایکٹ1999ء کے تحت چیئرمین اور بورڈز آف مینجمنٹ کے ممبران کے نام صوبائی کابینہ کے سامنے پیش کئے گئے۔مجوزہ تجاویز کی روشنی میں Prosthetic and orthotic کے شعبے سے پروفیسر ڈاکٹر محمد ایاز خان،ممتاز سوشل ورکر کومل یونس،قیصر جمال، محکمہ ہذا سے مسز عظمہ جبین اور جاوید غنی شامل ہیں۔کابینہ نے چیئرمین اور بورڈز آف مینجمنٹ کے ممبران کی منظوری دیدی۔

.

صوبائی کابینہ کوچیف سیکرٹری کی زیر قیادت سوات سرینہ ہوٹل کیلئے نئی لیز ایگریمنٹ کیلئے قائم کمیٹی نے سفارشات پیش کیں۔وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ تمام پراسز کوقانون کے مطابق شفاف طریقے سے مکمل کیا جائے۔ وزیر

Facebook Comments