شہ سرخیاں
Home / تازہ ترین / چترال کو کرونا وائریس کی وباء سے بچانے کیلئے پہلی بار لواری سرنگ کے ساتھ سینٹائیزر واک تھرو گیٹ نصب کیا گیا۔ واک تھرو میں سے آنے والے لوگ گزر کر ان پر جراثیم کش سپرے کے ساتھ ساتھ ان کی بخار بھی معلوم کیا جائے گا۔

چترال کو کرونا وائریس کی وباء سے بچانے کیلئے پہلی بار لواری سرنگ کے ساتھ سینٹائیزر واک تھرو گیٹ نصب کیا گیا۔ واک تھرو میں سے آنے والے لوگ گزر کر ان پر جراثیم کش سپرے کے ساتھ ساتھ ان کی بخار بھی معلوم کیا جائے گا۔

چترال(گل حماد فاروقی) کرونا وائریس کی وباء کو روکنے  چترال کو اس سے بچانے کیلئے تحصیل میونسپل انتظامیہ روز اول سے تگ و دو کررہی ہے۔ اس سلسلے میں TMA چترال نے  تحصیل میونسپل آفیسر مصبا ح الدین کی نگرانی میں دروش اور چترال کے عملہ نے مشترکہ طور پر لوری سرنگ کے قریب براڈام میں پہلا  سمارٹ سینٹائزر  واک تھرو گیٹ نصب کیا گیا  جو کرونا وائریس کی روک تھام میں کلیدی کردار ادا کرے گا۔نیچے اضلاع سے جو بھی مسافر چترال میں داحل ہوگا وہ سب سے پہلے اس واک تھر و گیٹ میں سے گزرے گا جہاں اس کے اوپر جراثیم سپرے ہوگا اور اس کے جسم کا درجہ حرارت بھی معلوم کرے گا اگر کسی  مسافر کو ٹمپریچر  ہو اس کے سنسرنظام کے ذریعے اس واک تھرو میں گھنٹی بجے گی جو اس مریض کی مزید تشحیص اور علاج کیلئے آسانی پیدا کرے گی۔
تحصیل میونسپل انتظامیہ کی ترجمان امین الرحمان نے میڈیا کو بتایا کہ  عشریت، براڈام چترال کا گیٹ وے ہے جہاں نیچے سے آنے والے لوگ اس واک تھرو میں سے گزرنے کے بعد جراثیم سے پاک ہوکر چترال میں داحل ہوں گے اور امید ہے اس سے کرونا وائیرس کی وباء پھیلنے کا حطرہ کم سے کم ہوگا۔
ایڈیشنل اسسٹنٹ کمشنر عبد الحق نے کہا  ہم کرونا وائریس کی روک تھام کیلئے ہر ممکن کوشش کررہے ہیں۔ یہاں واک تھرو لگانے سے یہ فائدہ ہوگا کہ اس گیٹ میں سے گزرنے والے پر جراثیم کش سپرے ہوگا اور  اس میں تھرمامیٹر بھی لگا ہوتا ہے جس مسافر کو بھی بخار ہو یہ مشین اس کی نشاندہی کرے گا اور ایسے مسافروں کو ہم  آسانی سے مزید تشحیص اور علاج  معالجے میں آسانی ہوگی۔
تحصیل میونسپل آفیسر مصبا ح الدین نے مقامی صحافیوں کو بتایا کہ تحصیل انتظامیہ کا عملہ دن رات محنت کرکے کرونا وائریس کی روک تھام کیلئے کوششیں کررہی ہیں جس میں متحلف عوامی مقامات، مساجد، ہسپتال، سبزی منڈی، چوراہوں وغیرہ میں جراثیم کش سپرے کرنا، لوگوں میں ماسک، سینٹائزر اور دستانے مفت تقسیم کرنا  شامل ہیں۔ ٹی ایم او مصباح الدین نے کہا  ہم محدود وسائیل میں اپنے بساط کے مطابق کوشش کرتے ہیں کہ کرونا وائریس کی وباء کو مزید پھیلنے سے روکے مگر بدقسمتی سے چترال میں اب یہ وباء آچکا ہے تو اب ہمیں مزید احتیاط کی ضرورت ہے۔
انہوں نے عوام پر زو ردیا کہ وہ گھروں میں رہے، بلا ضرورت بازاروں میں نہ جائے، سماجی رابطوں  میں فاصلہ رکھے اور لوگوں سے گلے ملنا یا ہاتھ ملانے سے گریز کرے۔ انہوں نے کہا کہ جب تک ہم خود باہر جاکر اس وباء کو گھر میں نہ بلائے یہ خود بحود کسی کے گھر نہیں جاتی مگر اس کو پھیلنے میں زیادہ تر ہماری اپنی غلطی ہوتی ہے کہ ہم ایسے جگہوں میں جاتے ہیں لوگوں سے ملتے ہیں جہاں یہ جراثیم موجود ہونے کا حدشہ ہو۔
Facebook Comments
error: Content is protected !!